میں تو سمجھا تھا زندگی کا سفر
اب کسی موڑ پر نہ خم ہوگا
اپنے صحرا میں اب گلستاں ہے
اب نہ کوئی نقش پا بہم ہوگا
علم کی سنگلاخ وادی میں
اب نہ کوئی اپسرا ہی اترے گی
اپنے اس پرسکون ساحل سے
اب نہ کوئی موج آ کے الجھے گی

موج پر اپنی موج میں آئی
اپسرا، آسماں کے خیمے سے
میرے خیمے میں یوں اتر آئی
جیسے انگڑائی ٹوٹ کر آئے
جیسے فطرت کے سارے رازوں کی
شہ کلید اپنے ہاتھ میں آئے

زندگی خواب کی فصیلوں سے
رات کو چپکے سے نکل آئی
جن کو دفنا چکے تھے ہم کب سے
ہم سے وہ خواب مانگنے آئی
زندگی پھر نئے فسانے کا
ہم سے عنوان پوچھنے آئی

اس کے گھنگھور سے گھنے گیسو
دل کی دھرتی پہ آ بکھرتے ہیں
لانبی پلکوں سے جھانکتی آنکھیں
جانے کس کس گماں سے تکتی ہیں
اس کو تکتا ہوں سوچتا ہوں میں
کس طرح خواب کی مسافت کو
اپسرا کے لیے میں گھر کر دوں
آرزو کی تمازتوں کی قسم
اتنا سینچوں اسے، امر کر دوں
اپسرا کی سوال آنکھوں سے
کیسے کہہ دوں یہ سب، اگر کہ دوں

اس تحریر كو شیئر كریں
Share on facebook
Share on twitter
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on email
Dr Irfan Shehzad

Dr Irfan Shehzad

Dr Irfan Shehzad belongs to Rawalpindi, Pakistan. He holds a doctorate in Islamic Studies from National University of Modern Languages (NUML) Islamabad, Pakistan. He is working as a companion to Ghamidi Center of Islamic Learning Dallas, USA. He is an assistant research fellow with Al-Mawird Pakistan. He is the author of the book, “Qanoon-e-Itmam-e-Hujjat awr Us kay Itlaqaat: Janab Javed Ahmad Ghamidi ki Tawzihaat par Aetrazaat awr Ishkalaat ka Jaiza”, published by Almawrid Lahore Pakistan. Dr Irfan Shehzad writes and speaks on religious, social and sociopolitical issues. His articles are published in different scholarly journals including Ishraq, Lahore, Pakistan, Al-Shariah Gujranwala Pakistan and on social media.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *