اتنا سوچ لو جاناں
پریم کی چتاؤں میں
زندہ جلنا پڑتا ہے
اتنا سوچ لو جاناں
ایسا کرنا پڑتا ہے
خواب تم نے دیکھے ہیں
منزلوں کو دوری پر
منزلوں سے پہلے ہی
راستے میں مجبوری
بے شمار اندیشے
خوا ب توڑ دیتے ہیں
جن کو اپنا کہتے ہیں
ساتھ چھوڑ دیتے ہیں
وہ، انا کی دیواریں
اس طرح اٹھاتے ہیں
جن کو توڑتے اپنے
ہاتھ ٹوٹ جاتے ہیں
ضبط کی فصیلوں میں
کھولتے سے اشکوں کو
راستہ نہیں ملتا
خون بن کر بہتے ہیں
اشک جب بھی بہتے ہیں
دید کو پریمی کی
آنکھ یوں ترستی ہے
جیسے منزلوں پیچھے
راہ سے بھٹکنے پر
جان سے تہی بدو
پیاس سے سسکتے ہیں
وحشتوں سے جنگ ہوگی
دنیا کربلا ہوگی
کربلا سی دنیا میں
ہار کر سبھی کچھ تو
نہ تو نامور ہوگا
نہ ہی تیرے دشمن پر
کوئی بھی شتم ہوگا
چل سکو تو آجاؤ
ورنہ سوچ لو جاناں
واپسی کے رستے میں
نارسائی کی آتش
عمر بھر جلاتی ہے
سب خوشی بھی مل جائے
پھر بھی اک کسک کوئی
عمر بھر کھٹکتی ہے
زندگی بھٹکتی ہے
25 جون 2004

اس تحریر كو شیئر كریں
Share on facebook
Share on twitter
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on email
Dr Irfan Shehzad

Dr Irfan Shehzad

Dr Irfan Shehzad belongs to Rawalpindi, Pakistan. He holds a doctorate in Islamic Studies from National University of Modern Languages (NUML) Islamabad, Pakistan. He is working as a companion to Ghamidi Center of Islamic Learning Dallas, USA. He is an assistant research fellow with Al-Mawird Pakistan. He is the author of the book, “Qanoon-e-Itmam-e-Hujjat awr Us kay Itlaqaat: Janab Javed Ahmad Ghamidi ki Tawzihaat par Aetrazaat awr Ishkalaat ka Jaiza”, published by Almawrid Lahore Pakistan. Dr Irfan Shehzad writes and speaks on religious, social and sociopolitical issues. His articles are published in different scholarly journals including Ishraq, Lahore, Pakistan, Al-Shariah Gujranwala Pakistan and on social media.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *