نظریاتی انسان ایک غیر انسانی کردار

نظریاتی انسان غیر انسانی اور غیر فطری کردار ہوتا ہے۔ ایسا شخص، فرد، سماج، اقدار، ثقافت ہر چیز کے لیے خطرہ ہوتا ہے۔ اس سے بچنا چاہیے، اپنے آدرشوں کے ساتھ اس کی وابستگی کی شدت سے متاثر ہونے کی بجائے، اسے دماغی خلل کی قسم سمجھ کر ترس کھانا چاہیے۔
ایسے غیر انسانی کرداروں کو لیڈر سمجھنے اور بنانے کی غلطی انسانیت کے خلاف بد ترین جرائم میں سے ہے۔
انسانوں کی حقیقی اور فطری ضروریات: مزدوری، کاروبار، تعلیم، انصاف، تحفظ اور اس قبیل کی چیزیں ہیں۔ یہی سماجی اور سیاسی ایکٹی وزم کے حقیقی میدان ہونے چاہییں۔
نظریاتی ایکٹی وزم اپنے تخیل میں ان حقیقی مسائل کو نظر انداز کر دیتا ہے۔ لیکن ہر جدوجہد کے آخر میں افراد نتائج اور کامیابی اور ناکامی کو انھیں بنیادی اشاریوں کے تحت سود و زیاں کے فیصلے کر رہے ہوتے ہیں۔
39

اس تحریر كو شیئر كریں
Share on facebook
Share on twitter
Share on linkedin
Share on whatsapp
Share on email
Dr Irfan Shehzad

Dr Irfan Shehzad

Dr Irfan Shehzad belongs to Rawalpindi, Pakistan. He holds a doctorate in Islamic Studies from National University of Modern Languages (NUML) Islamabad, Pakistan. He is working as a companion to Ghamidi Center of Islamic Learning Dallas, USA. He is an assistant research fellow with Al-Mawird Pakistan. He is the author of the book, “Qanoon-e-Itmam-e-Hujjat awr Us kay Itlaqaat: Janab Javed Ahmad Ghamidi ki Tawzihaat par Aetrazaat awr Ishkalaat ka Jaiza”, published by Almawrid Lahore Pakistan. Dr Irfan Shehzad writes and speaks on religious, social and sociopolitical issues. His articles are published in different scholarly journals including Ishraq, Lahore, Pakistan, Al-Shariah Gujranwala Pakistan and on social media.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *