Dr Irfan Shehzad

مذہب پر چند اعتراضات کا جائزہ

مذہب پروہی اعتراض قابل اعتنا سمجھا جا سکتا ہے جو مذہب پر ہو نہ کہ اہل مذہب کی تعبیر و کردار پر۔ معترض اگر متعصب نہیں تو وہ بتائے گا کہ اس کے اعتراض کا محل مذہب ہے یا اہل مذہب کی تعبیر اور ان کا کردار، ورنہ خلط مبحث ہوگا اور سطحی ذہن کے لیے ایسی کنفیوژن کفایت کرتی…

Read more

اجماع و تواتر، ایمان بالغیب اور متشکک ذہن

اصطلاحات بعض اوقات بڑے بڑے حقائق کے لیے حجاب بن جاتی ہیں۔ خصوصاً ان لوگوں کے لیے جن کی نظر بیان حقائق کی بجائے الفاظ کی نامکمل تفہیم تک محدود رہ جاتی ہے۔ اجماع، تواتر اور ایمان بالغیب، مذھبی حلقوں میں استعمال ہونے والی یہ اصطلاحات محض مذھبی علم و عقائد کی ترسیل و تسلیم کے ذرائع نہیں ہیں جن…

Read more

کیا زبان قطعی الدلالت نہیں ہو سکتی؟

قطعی الدلالت کی یہ بحث اس کلام کے بارے میں ہے جو قطعی الدلالت کا مدعی ہے اور اس صنف کلام سے تعلق رکھتا ہے جس کا مقصد کلام کی ذو معنویت نہیں ہے، جیسے شاعری اور ادب میں ایہام گوئی اور طنز و توریہ جن میں ذو معنویت کا پہلو پایا جاتا ہے۔ زبان کا قطعی الدلالت ہونا ایک…

Read more

ایمان بالغیب کا راستہ: تسلیم، مشاہدہ یا استدلال

انسان کے پاس حصول علم کے دو ذرائع ہیں: تجربہ و مشاہدہ اور عقلی استدلال۔ عقل، تجربہ و مشاہدہ کے ذریعے سے حاصل ہونے والے معلوم سے نامعلوم پر استدلال کرتی ہے۔ ثابت شدہ کی بنیاد پر غیر ثابت کو استدلال و استنباط کے طریقے سے پہلے مفروض کرتی اور پھر دستیاب شواہد کی بنیاد پر استدلال سے اس کا…

Read more

مڈل کلاس تعلیم یافتہ اشرافیہ کا استبداد

A single king has power to damn a nation. اشرافیہ صرف حکم ران، جاگیردار، سرمایہ دار اور سیاست دانوں میں منحصر نہیں ہوتی۔ جس گروہ یا طبقے کو سماج میں کسی بھی لحاظ سے طاقت اوراثرورسوخ حاصل ہوجاتا ہے اورعوام کے علیحدہ اپنی ایک شناخت قائم کرلیتا ہے، وہ اشرافیہ ہے۔ طاقت کی نفسیات اس میں وہ تمام خصوصیات پیدا…

Read more

خاتم النبیین کا درست مفہوم

:آیت ختم نبوت پر احمدی حضرات کے ملاحظات درج ذیل ہیں مَا كَانَ مُحَمَّدٌ اَبَا٘ اَحَدٍ مِّنْ رِّجَالِكُمْ وَلٰكِنْ رَّسُوْلَ اللّٰهِ وَخَاتَمَ النَّبِيّٖنَ وَكَانَ اللّٰهُ بِكُلِّ شَيْءٍ عَلِيْمًا (الاحزاب٣٣: ٤٠) “محمد تمھارے مردوں میں سے کسی کے باپ نہیں ہیں، بلکہ اللہ کے رسول اور خاتم النبیین ہیں۔ اور اللہ ہر چیز سے با خبر ہے۔” :احمدی حضرات کے ترجمے…

Read more

انڈیا اور پاکستان کے عام انسان

انڈیا کا انتہا پسند پاکستان کے انتہا پسند کی مانند ہے اور پاکستان کا نارمل انسان انڈیا کے نارمل انسان کی طرح ہے۔ نارمل انسان خبر نہیں بنتا حالانکہ وہ غالب ترین اکثریت ہوتا ہے۔ ہر روز ہزاروں نارمل واقعات انھیں کے ہوتے ہیں جو خبر نہیں بنتے۔ میڈیا چند انتہا پسندوں کے چند انتہا پسند واقعات کو اتنا دہراتا…

Read more

انسانی فطرت اور سیاست بازی

انسانی سماج کو اس کی فطرت پر چھوڑ دیا جائے تو وہ رویہ سامنے آتا ہے جو آج انڈیا اور پاکستان کے عوام ایک مشترکہ دکھ اور تکلیف میں ایک دوسرے کے لیے محسوس کر رہے ہیں۔ اور ایک دوسرے کی مدد کرنا چاہتے ہیں۔ اسی سماج کو نام نہاد نظریات کی سیاست بازی کے ذریعے سے ایک دوسرے کے…

Read more

زبان کیوں قطعی نہیں ہوتی ؟

“سارے جہاں کا درد ہمارے جگر میں ہے۔” اس مصرع کا بے غبار مطلب اگر آپ کو سمجھ آ رہا ہے تو یہ سادہ فکری ہے۔ اس کو پہلے درج ذیل تنقیحات سے گزار کر مراد سمجھی جائے گی۔ ۔۔۔ سوال یہ ہے کہ جگر میں جہاں کا درد کیسے سما سکتا ہے؟ یہ ممکن نہیں۔ شاعر کا دماغ درست…

Read more

انڈیا اور پاکستان میں اکثریت کی ظلم و زیادتی کے رویے کی بنیادی وجہ

میجورٹی ازم۔ اکثریت کی تعلی اور زیادتی۔ برصغیر میں اس کی بنیاد جداگانہ انتحابات 1909 میں ڈالی گئی جس کے تلخ پھل تقسیم ہند اور اب انڈیا اور پاکستان میں غالب اکثریت کی تعلی اور تعدی کی صورت میں نکلتے نظر آتے ہیں۔ مذہب کو سیاسی رقابت کے لیے استعمال کیا جائے تو نتیجہ سماجی تقسیم تک چلا جاتا ہے۔…

Read more