انسانی اجتہادات اور شریعت خداوندی کے بیان میں یکساں اصطلاحات کا غلط استعمال

انسانی اجتہادات اور بیانِ شریعت میں یکساں اصطلاحات کا استعمال خدا پر جھوٹ باندھنے کے مترادف ہے۔ فتوی کی زبان میں فروعی مسائل (یعنی وہ مسائل جن کا ذکر قرآن و حدیث میں نہ ہو) کے احکامات کے بیان کے لیے شرعًا حلال یا شرعًا حرام اور قطعًا جائز اور ناجائز جیسے الفاظ کااستعمال اہل افتاء کے ہاں عام دیکھنے

مكمل تحریر پڑھیںََ

حضرت حسین رضی اللہ عنہ کا اقدام: ڈاکٹر محسن نقوی کی رائے پر تبصرہ

پاکستان کے علمی و تحقیقی ادارے، البصیرہ، کے زیر اہتمام شائع ہونے والے ماہنامہ پیام کا شمارہ اکتوبر 2017، ماہ محرم کے لحاظ سے حضرت امام حسین رضی اللہ عنہ اور ان کے اقدام پر اہل علم کے مضامین پر مشتمل تھا۔ اس شمارے میں ڈاکٹر محسن نقوی صاحب کا مضمون، ‘واقعہ کربلا کے کلامی پہلو’ کے عنوان سے شائع

مكمل تحریر پڑھیںََ

ایک نہایت اہم کتاب “نماز کے اختلافات اور ان کا آسان حل” از ڈاکٹر محی الدین غازی، پر تبصرہ

ڈاکٹر محی الدین غازی انڈیا سے تعلق رکھنے والے، دینی علوم کے ماہر اور متوازن فکر کی حامل شخصیت ہیں۔ ڈاکٹر صاحب وحدتِ امت کے ایک متحرک داعی ہیں۔ غازی صاحب کی کتاب، “نماز کے اختلافات اور ان کا آسان حل”، ایک نہایت ہی اہم موضوع پر ایک چشم کُشا کتاب ہے، جس سے دین کے اندر علم کا ایک

مكمل تحریر پڑھیںََ

فطرت بطور معیار

فطرت سے مراد انسانوں میں پائے جانے والے وہ عمومی پیدایشی رجحانات ہیں، جو انسانی شعور کو حق و باطل,خیر و شر، اور طیبات و خبائث میں تمیز کی صلاحیت عطا کرتے ہیں۔ وحی کی عمارت انہیں بنیادوں پر استوار ہوتی ہے۔ فطرتِ انسانی ان اقدار کے لیے معیار ہے یا نہیں، اس بحث کو ہم تین سطح پر دیکھتے

مكمل تحریر پڑھیںََ

2013 کے انتخابات کے دوران مولانا فضل الرحمن کی زبان سے سننا کو ملا، کہ عمران خان کو ووٹ دینا”شرعًا حرام” ہے۔ بعد میں مولانا صاحب نے خود بھی عمران خان کے اتحاد فرما لیا۔

فتوی کی زبان میں فروعی مسائل (یعنی نئے مسائل جن کا ذکر قرآن و حدیث میں نہ ہو) کے احکامات کے لیے شرعًا اور قطعًا جیسے الفاظ کااستعمال اہل افتاء کے ہاں عام دیکھنے میں آتا ہے۔ ایسا ہی حال دیگر اہل علم کا بھی ہے جو کسی بھی فروعی یا اطلاقی مسئلے کا حکم بیان کرتے ہوئے ایسا لہجہ

مكمل تحریر پڑھیںََ

زنا بالجبر، جمہور فقہا کا موقف اور ڈاکٹر مشتاق صاحب

زنا بالجبر کی حالیہ بحث کے تناظر میں ہمارا نقد، زنا بالجبر یا عصمت دری کے عمومی فقہی موقف پر تھا جو زنا بالرضا اور زنا بالجبر کو ایک ہی جرم تصور کرتا ہے، پھر اگر اس جرم کی فقہی (شرعی) نصاب شھادت (چار مرد عینی گواہ) میسر نہ ہوں تو اس مسئلے کو سیاستہ حل کرنا تجویز کرتا ہے۔

مكمل تحریر پڑھیںََ

زکوۃ، ایک تفہیم نو

از ڈاکٹر عرفان شہزاد وحی، خدا کی وہ عظیم نعمت ہے جو انسان اوراس کے سماج سے متعلق ایسے مستقل نوعیت کے معاملات میں متعین رہنمائی کرتی ہے جن کا کوئی معین حل نکالنا یا بالاتفاق کسی حتمی نتیجے تک پہنچنا عقلِ انسانی کے لیے ممکن نہیں ہوتا، اور اسی وجہ سے وہ محلِ نزاع و بحث بنے رہتے ہیں۔

مكمل تحریر پڑھیںََ

روزہ کے استطاعت کی بحث، فقھا اور غامدی صاحب

راقم: ڈاکٹر عرفان شہزاد روزہ رکھنے میں فرد کی استطاعت اور عدم استطاعت کی بحث کے پیچھے ایک خاص فقہی ذہن کار فرما ہے جس پر بات کرنا ضروری ہے۔ لمبے چوڑے اصولی مباحث کے پیچھے مسئلہ صرف دو نکاتی ہے: 1) روزہ رکھنے میں فرد کی استطاعت اور عدم استطاعت کی تعیین کے لیے معیار کیا ہو؟ 2) اس

مكمل تحریر پڑھیںََ

دین کے مقدمات سے ہی دینی احکام او نواہی کا اثبات اور نفی ہوتی ہے ۔

دین کے مقدمات سے ہی دینی احکام او نواہی کا اثبات اور نفی ہوتی ہے ۔ علم و عقل کا مسلمہ ہے کہ کسی امرکا اثبات یا نفی کو کسی منفی مقدمے پر قائم نہیں کیا جا سکتا۔ جہاں تک دین کے اوامر و نواہی اور ان کے اطلاقات کا تعلق ہے تو یہ بھی دین کے اپنے مقدمات پر

مكمل تحریر پڑھیںََ