حفظ قرآن کی رسم پر نظر ثانی کی ضرورت (2)

ماہنامہ اشراق ماہ جون 2019 کے شمارےمیں میرا مضمون “حفظ قرآن کی رسم پر نظر ثانی کی ضرورت” شائع ہوا جس پر ملک کے متعدد اہل علم نے التفات کرتے ہوئے اپنے نکاتِ اعتراضات پیش کیے جن میں مفتی منیب الرحمن صاحب کا نقد، بعنوان، “کیاحفظِ قرآن بدعت ہے؟” ان کے فیس بک کے آفیشل پیچ پر شائع ہوا (

مكمل تحریر پڑھیںََ

حریت فکر کے دو علم بردار:حضرت موسیٰ اور حضرت عمر کی شخصی و فکری مماثلتیں

حضرت موسیٰ علیہ السلام اور حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ کے درمیان بہت سی طبعی اور مزاجی مماثلتیں پائی جاتی ہیں۔دونوں شخصیات غیرت و حمیت، جرأت و بہادری، عقل و بصیرت، حریت فکر، جرأت اظہار اور قائدانہ کردار کا مجسم استعارہ ہیں۔ایک روایت کے مطابق رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک موقع پر حضرت عمر کو حضرت

مكمل تحریر پڑھیںََ

پردہ کے احکام

مسلم خواتین کے پرد ہ کی حدود و قیود ایک معرکۃالآرا مباحثہ بناچلاآ رہا ہے۔خواتین کے حجاب کے مسئلے میں بہت افراط و تفریط برتی گئی ہے۔ اس سے بہت سے پیچیدہ قسم کے عملی نوعیت کے مسائل نے جنم لیا ہے۔ اہل مذہب کے ہاں رائج حجاب کا تصور اور اس کی عملی صورتوں میں وقت، ماحول اور کلچر

مكمل تحریر پڑھیںََ

مولانا ظفر علی خان کا ایک مشہور شعر اور قرآن کی ایک آیت کے ساتھ اس کےمعنوی اشتراک کے بارے میں ایک مغالطہ

مولانا ظفر علی خان کا یہ مشہور شعر : خدا نے آج تک اس قوم کی حالت نہیں بدلی نہ ہو جس کو خیال آپ اپنی حالت کے بدلنے کا قرآن کی آیت: انَّ اللَّـهَ لَا يُغَيِّرُ مَا بِقَوْمٍ حَتَّىٰ يُغَيِّرُوا مَا بِأَنفُسِهِمْ سے ماخوذ سمجھا جاتا ہے۔ اس بارے چند غلط فہمیاں دور کرلی جانی چاہیے۔ پہلی بات یہ

مكمل تحریر پڑھیںََ

انسانی اجتہادات اور شریعت خداوندی کے بیان میں یکساں اصطلاحات کا غلط استعمال

انسانی اجتہادات اور بیانِ شریعت میں یکساں اصطلاحات کا استعمال خدا پر جھوٹ باندھنے کے مترادف ہے۔ فتوی کی زبان میں فروعی مسائل (یعنی وہ مسائل جن کا ذکر قرآن و حدیث میں نہ ہو) کے احکامات کے بیان کے لیے شرعًا حلال یا شرعًا حرام اور قطعًا جائز اور ناجائز جیسے الفاظ کااستعمال اہل افتاء کے ہاں عام دیکھنے

مكمل تحریر پڑھیںََ

حضرت حسین رضی اللہ عنہ کا اقدام: ڈاکٹر محسن نقوی کی رائے پر تبصرہ

پاکستان کے علمی و تحقیقی ادارے، البصیرہ، کے زیر اہتمام شائع ہونے والے ماہنامہ پیام کا شمارہ اکتوبر 2017، ماہ محرم کے لحاظ سے حضرت امام حسین رضی اللہ عنہ اور ان کے اقدام پر اہل علم کے مضامین پر مشتمل تھا۔ اس شمارے میں ڈاکٹر محسن نقوی صاحب کا مضمون، ‘واقعہ کربلا کے کلامی پہلو’ کے عنوان سے شائع

مكمل تحریر پڑھیںََ

ایک نہایت اہم کتاب “نماز کے اختلافات اور ان کا آسان حل” از ڈاکٹر محی الدین غازی، پر تبصرہ

ڈاکٹر محی الدین غازی انڈیا سے تعلق رکھنے والے، دینی علوم کے ماہر اور متوازن فکر کی حامل شخصیت ہیں۔ ڈاکٹر صاحب وحدتِ امت کے ایک متحرک داعی ہیں۔ غازی صاحب کی کتاب، “نماز کے اختلافات اور ان کا آسان حل”، ایک نہایت ہی اہم موضوع پر ایک چشم کُشا کتاب ہے، جس سے دین کے اندر علم کا ایک

مكمل تحریر پڑھیںََ

فطرت بطور معیار

فطرت سے مراد انسانوں میں پائے جانے والے وہ عمومی پیدایشی رجحانات ہیں، جو انسانی شعور کو حق و باطل,خیر و شر، اور طیبات و خبائث میں تمیز کی صلاحیت عطا کرتے ہیں۔ وحی کی عمارت انہیں بنیادوں پر استوار ہوتی ہے۔ فطرتِ انسانی ان اقدار کے لیے معیار ہے یا نہیں، اس بحث کو ہم تین سطح پر دیکھتے

مكمل تحریر پڑھیںََ

2013 کے انتخابات کے دوران مولانا فضل الرحمن کی زبان سے سننا کو ملا، کہ عمران خان کو ووٹ دینا”شرعًا حرام” ہے۔ بعد میں مولانا صاحب نے خود بھی عمران خان کے اتحاد فرما لیا۔

فتوی کی زبان میں فروعی مسائل (یعنی نئے مسائل جن کا ذکر قرآن و حدیث میں نہ ہو) کے احکامات کے لیے شرعًا اور قطعًا جیسے الفاظ کااستعمال اہل افتاء کے ہاں عام دیکھنے میں آتا ہے۔ ایسا ہی حال دیگر اہل علم کا بھی ہے جو کسی بھی فروعی یا اطلاقی مسئلے کا حکم بیان کرتے ہوئے ایسا لہجہ

مكمل تحریر پڑھیںََ