مذہب پر چند اعتراضات کا جائزہ

مذہب پروہی اعتراض قابل اعتنا سمجھا جا سکتا ہے جو مذہب پر ہو نہ کہ اہل مذہب کی تعبیر و کردار پر۔ معترض اگر متعصب نہیں تو وہ بتائے گا کہ اس کے اعتراض کا محل مذہب ہے یا اہل مذہب کی تعبیر اور ان کا کردار، ورنہ خلط مبحث ہوگا اور سطحی ذہن کے لیے ایسی کنفیوژن کفایت کرتی

مكمل تحریر پڑھیںََ

اجماع و تواتر، ایمان بالغیب اور متشکک ذہن

اصطلاحات بعض اوقات بڑے بڑے حقائق کے لیے حجاب بن جاتی ہیں۔ خصوصاً ان لوگوں کے لیے جن کی نظر بیان حقائق کی بجائے الفاظ کی نامکمل تفہیم تک محدود رہ جاتی ہے۔ اجماع، تواتر اور ایمان بالغیب، مذھبی حلقوں میں استعمال ہونے والی یہ اصطلاحات محض مذھبی علم و عقائد کی ترسیل و تسلیم کے ذرائع نہیں ہیں جن

مكمل تحریر پڑھیںََ

کیا زبان قطعی الدلالت نہیں ہو سکتی؟

قطعی الدلالت کی یہ بحث اس کلام کے بارے میں ہے جو قطعی الدلالت کا مدعی ہے اور اس صنف کلام سے تعلق رکھتا ہے جس کا مقصد کلام کی ذو معنویت نہیں ہے، جیسے شاعری اور ادب میں ایہام گوئی اور طنز و توریہ جن میں ذو معنویت کا پہلو پایا جاتا ہے۔ زبان کا قطعی الدلالت ہونا ایک

مكمل تحریر پڑھیںََ

ایمان بالغیب کا راستہ: تسلیم، مشاہدہ یا استدلال

انسان کے پاس حصول علم کے دو ذرائع ہیں: تجربہ و مشاہدہ اور عقلی استدلال۔ عقل، تجربہ و مشاہدہ کے ذریعے سے حاصل ہونے والے معلوم سے نامعلوم پر استدلال کرتی ہے۔ ثابت شدہ کی بنیاد پر غیر ثابت کو استدلال و استنباط کے طریقے سے پہلے مفروض کرتی اور پھر دستیاب شواہد کی بنیاد پر استدلال سے اس کا

مكمل تحریر پڑھیںََ

خاتم النبیین کا درست مفہوم

:آیت ختم نبوت پر احمدی حضرات کے ملاحظات درج ذیل ہیں مَا كَانَ مُحَمَّدٌ اَبَا٘ اَحَدٍ مِّنْ رِّجَالِكُمْ وَلٰكِنْ رَّسُوْلَ اللّٰهِ وَخَاتَمَ النَّبِيّٖنَ وَكَانَ اللّٰهُ بِكُلِّ شَيْءٍ عَلِيْمًا (الاحزاب٣٣: ٤٠) “محمد تمھارے مردوں میں سے کسی کے باپ نہیں ہیں، بلکہ اللہ کے رسول اور خاتم النبیین ہیں۔ اور اللہ ہر چیز سے با خبر ہے۔” :احمدی حضرات کے ترجمے

مكمل تحریر پڑھیںََ

ایمان بالغیب کا راستہ: تسلیم، مشاہدہ یا استدلال

انسان کے پاس حصول علم کے دو ذرائع ہیں: تجربہ و مشاہدہ اور عقلی استدلال۔ عقل، تجربہ و مشاہدہ کے ذریعے سے حاصل ہونے والے معلوم سے نامعلوم پر استدلال کرتی ہے۔ ثابت شدہ کی بنیاد پر غیر ثابت کو استدلال و استنباط کے طریقے سے پہلے مفروض کرتی اور پھر دستیاب شواہد کی بنیاد پر استدلال سے اس کا

مكمل تحریر پڑھیںََ

معرکہ حق و باطل ابلیس کی وجہ سے برپا نہیں ہوا

اللہ تعالی نے ابلیس کے انکار سے پہلے اپنا منصوبہ بتایا تھا کہ وہ زمین میں اپنا خلیفہ بھیج رہا ہے۔ فرشتوں نے ابلیس کے انکار سے پہلے کہا کہ انسان زمین میں فساد مچائے گا۔ کیونکہ آزاد ارادہ کا ایک نتیجہ اس کا غلط استعمال ہے۔ نیز جنات کے بارے میں تجربہ ہو چکا تھا کہ انہوں نے زمین

مكمل تحریر پڑھیںََ

قرآن مجید کے حفظ کی رسم پر نظر ثانی کی ضرورت

قرآن مجید کے حفظ کی رسم صدیوں سے مسلم سماج میں رائج ہے۔ عام تاثر یہ ہے کہ یہ قرآن مجید کی حفاظت کا ذریعہ اور باعث اجر و سعادت ہے ۔ یہ تصور چند غلط فہمیوں پر مبنی ہے۔ قرآن مجید کا مقصد اس کے کلام اور پیام کا ابلاغ ہے : {كِتَابٌ أَنْزَلْنَاهُ إِلَيْكَ مُبَارَكٌ لِيَدَّبَّرُوا آيَاتِهِ وَلِيَتَذَكَّرَ

مكمل تحریر پڑھیںََ

خدا کی رحمت اور عدل: ایک حقیقت کے دو نام

فطرت الہی اور فطرت انسان کی مشترکہ اساسات اور احساسات: فطرت الہی کو جاننے اور سمجھنے کا راستہ فطرت انسانی ہے۔ {فِطْرَتَ اللَّهِ الَّتِي فَطَرَ النَّاسَ عَلَيْهَا لَا تَبْدِيلَ لِخَلْقِ اللَّهِ ذَلِكَ الدِّينُ الْقَيِّمُ} [الروم: 30] “تم اللہ کی بنائی ہوئی فطرت کی پیروی کرو، جس پر اُس نے لوگوں کو پیدا کیاہے۔” اخلاقیات اور جمالیات کے باب میں انسانوں

مكمل تحریر پڑھیںََ